کیا کیا نہ زندگی کے فسانے رقم ہوئے

حمایت علی شاعر

کیا کیا نہ زندگی کے فسانے رقم ہوئے

حمایت علی شاعر

MORE BYحمایت علی شاعر

    کیا کیا نہ زندگی کے فسانے رقم ہوئے

    لیکن جو حاصل غم دل تھے وہ کم ہوئے

    اے تشنگیٔ درد کوئی غم کوئی کرم

    مدت گزر گئی ہے ان آنکھوں کو نم ہوئے

    ملنے کو ایک اذن تبسم تو مل گیا

    کچھ دل ہی جانتا ہے جو دل پر ستم ہوئے

    دامن کا چاک چاک جگر سے نہ مل سکا

    کتنی ہی بار دست و گریباں بہم ہوئے

    کس کو ہے یہ خبر کہ بہ عنوان زندگی

    کس حسن اہتمام سے مصلوب ہم ہوئے

    ارباب عشق و اہل ہوس میں ہے فرق کیا

    سب ہی تری نگاہ میں جب محترم ہوئے

    شاعرؔ تمہیں پہ تنگ نہیں عرصۂ حیات

    ہر اہل فن پہ دہر میں ایسے کرم ہوئے

    مأخذ :
    • کتاب : Naya daur (Pg. 261)
    • Author : Qamar Sultana

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے