کیا شہر میں ہے گرمئ بازار کے سوا

انور صدیقی

کیا شہر میں ہے گرمئ بازار کے سوا

انور صدیقی

MORE BYانور صدیقی

    کیا شہر میں ہے گرمئ بازار کے سوا

    سب اجنبی ہیں ایک دل زار کے سوا

    اس دشت بے خودی میں کہ دنیا کہیں جسے

    غافل سبھی ہیں اک نگۂ یار کے سوا

    چہروں کے چاند راکھ ہوئے بام بجھ گئے

    کچھ بھی بچا نہ حسرت دیدار کے سوا

    عالم تمام تیرگئ درد مضمحل

    ہاں اک فروغ شعلۂ رخسار کے سوا

    ساری شفق سمیٹ کے سورج چلا گیا

    اب کیا رہا ہے موج شب تار کے سوا

    جس سمت دیکھیے ہے صلیبوں کی اک قطار

    کوئی افق نہیں افق دار کے سوا

    مأخذ :
    • کتاب : Aazadi ke baad dehli men urdu gazal (Pg. 68)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے