کیا تنگ ہم ستم زدگاں کا جہان ہے

مرزا غالب

کیا تنگ ہم ستم زدگاں کا جہان ہے

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    دلچسپ معلومات

    چھٹا شعر مغل خاندان کے آخری بادشاہ اور غالب کے ہم عصر شاعر بہادر شاہ ظفر کے لئے کہا گیا

    کیا تنگ ہم ستم زدگاں کا جہان ہے

    جس میں کہ ایک بیضۂ مور آسمان ہے

    ہے کائنات کو حرکت تیرے ذوق سے

    پرتو سے آفتاب کے ذرے میں جان ہے

    حالانکہ ہے یہ سیلی خارا سے لالہ رنگ

    غافل کو میرے شیشے پہ مے کا گمان ہے

    کی اس نے گرم سینۂ اہل ہوس میں جا

    آوے نہ کیوں پسند کہ ٹھنڈا مکان ہے

    کیا خوب تم نے غیر کو بوسہ نہیں دیا

    بس چپ رہو ہمارے بھی منہ میں زبان ہے

    بیٹھا ہے جو کہ سایۂ دیوار یار میں

    فرماں رواۓ کشور ہندوستان ہے

    ہستی کا اعتبار بھی غم نے مٹا دیا

    کس سے کہوں کہ داغ جگر کا نشان ہے

    ہے بارے اعتماد وفا داری اس قدر

    غالبؔ ہم اس میں خوش ہیں کہ نامہربان ہے

    دہلی کے رہنے والو اسدؔ کو ستاؤ مت

    بے چارہ چند روز کا یاں میہمان ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Ghair Mutdavil Kalam-e-Ghalib (Pg. 148)
    • Author : Jamal Abdul Wahid
    • مطبع : Ghalib Academy Basti Hazrat Nizamuddin,New Delhi-13 (2016)
    • اشاعت : 2016
    • کتاب : Deewan-e-Ghalib Jadeed (Al-Maroof Ba Nuskha-e-Hameedia) (Pg. 309)
    • Author : Mufti Mohammad Anwar-ul-haque
    • مطبع : Madhya Pradesh Urdu Academy ,Bhopal (1904-1982)
    • اشاعت : 1904-1982

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY