کیا زمیں کیا آسماں کچھ بھی نہیں

آفاق صدیقی

کیا زمیں کیا آسماں کچھ بھی نہیں

آفاق صدیقی

MORE BYآفاق صدیقی

    کیا زمیں کیا آسماں کچھ بھی نہیں

    ہم نہ ہوں تو یہ جہاں کچھ بھی نہیں

    دیدہ و دل کی رفاقت کے بغیر

    فصل گل ہو یا خزاں کچھ بھی نہیں

    پتھروں میں ہم بھی پتھر ہو گئے

    اب غم سود و زیاں کچھ بھی نہیں

    کیا قیامت ہے کہ اپنے دیس میں

    اعتبار جسم و جاں کچھ بھی نہیں

    کیسے کیسے سر کشیدہ لوگ تھے

    جن کا اب نام و نشاں کچھ بھی نہیں

    ایک احساس محبت کے سوا

    حاصل عمر رواں کچھ بھی نہیں

    کوئی موضوع سخن ہی جب نہ ہو

    صرف انداز بیاں کچھ بھی نہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Pakistani Adab (Pg. 283)
    • Author : Dr. Rashid Amjad
    • مطبع : Pakistan Academy of Letters, Islambad, Pakistan (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY