کیوں اسیر گیسوئے خم دار قاتل ہو گیا

ابو الکلام آزاد

کیوں اسیر گیسوئے خم دار قاتل ہو گیا

ابو الکلام آزاد

MORE BYابو الکلام آزاد

    کیوں اسیر گیسوئے خم دار قاتل ہو گیا

    ہائے کیا بیٹھے بٹھائے تجھ کو اے دل ہو گیا

    کوئی نالاں کوئی گریاں کوئی بسمل ہو گیا

    اس کے اٹھتے ہی دگر گوں رنگ محفل ہو گیا

    انتظار اس گل کا اس درجہ کیا گل زار میں

    نور آخر دیدۂ نرگس کا زائل ہو گیا

    اس نے تلواریں لگائیں ایسے کچھ انداز سے

    دل کا ہر ارماں فداے دست قاتل ہو گیا

    قیس مجنوں کا تصور بڑھ گیا جب نجد میں

    ہر بگولہ دشت کا لیلیٰ محمل ہو گیا

    یہ بھی قیدی ہو گیا آخر کمند زلف کا

    لے اسیروں میں ترے آزادؔ شامل ہو گیا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کیوں اسیر گیسوئے خم دار قاتل ہو گیا نعمان شوق

    مآخذ
    • کتاب : muntakhab sho'raa (Pg. pdf)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY