کیوں ملی تھی حیات یاد کرو

نوشاد علی

کیوں ملی تھی حیات یاد کرو

نوشاد علی

MORE BYنوشاد علی

    کیوں ملی تھی حیات یاد کرو

    یاد رکھنے کی بات یاد کرو

    کون چھوٹا کہاں کہاں چھوٹا

    راہ کے حادثات یاد کرو

    ابھی کل تک وفا کی راہوں میں

    تم بھی تھے میرے ساتھ یاد کرو

    مجھ سے کیا پوچھتے ہو حال مرا

    خود کوئی واردات یاد کرو

    جس دم آنکھیں ملی تھی آنکھوں سے

    تھی کہاں کائنات یاد کرو

    بھول آئے جبیں کو رکھ کے کہاں

    کہاں پہنچے تھے رات یاد کرو

    دل کو آئینہ گر بنانا ہے

    آئینے کے صفات یاد کرو

    نکلے گا چاند انہیں اندھیروں سے

    ان سے ملنے کی رات یاد کرو

    چھوڑو جانے دو جو ہوا سو ہوا

    آج کیوں کل کی بات یاد کرو

    کرنا ہے شاعری اگر نوشادؔ

    میرؔ کا کلیات یاد کرو

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    کیوں ملی تھی حیات یاد کرو نعمان شوق

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY