کیوں زیست کا ہر ایک فسانہ بدل گیا

آنند نرائن ملا

کیوں زیست کا ہر ایک فسانہ بدل گیا

آنند نرائن ملا

MORE BY آنند نرائن ملا

    کیوں زیست کا ہر ایک فسانہ بدل گیا

    یہ ہم بدل گئے کہ زمانہ بدل گیا

    صیاد یاں وہی وہی طائر وہی ہیں دام

    لیکن جو زیر دام تھا دانہ بدل گیا

    بازیٔ حسن و عشق میں کچھ ہار ہے نہ جیت

    نظریں ملیں دلوں کا خزانہ بدل گیا

    بخت بشر وہی ہے بساط جہاں وہی

    ہر دور نو میں مات کا خانہ بدل گیا

    طاقت کے دوش پر ہے ازل سے بشر کی لاش

    بس تھوڑی تھوڑی دور پہ شانہ بدل گیا

    محفل کے حسب ذوق ہے مطرب کا ساز بھی

    محفل بدل گئی تو ترانہ بدل گیا

    ان داغہائے دل میں کوئی زخم نو نہیں

    شاید کسی نظر کا نشانہ بدل گیا

    ملاؔ کو زور طبع ہوا فیصلوں کی نذر

    دریا ابھی وہی ہے دہانہ بدل گیا

    مآخذ:

    • Book : Kulliyat-e-Anand Narayan Mulla (Pg. 408)
    • Author : Khaliq Anjum
    • مطبع : National Council for Promotion of Urdu Language-NCPUL (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY