لبالب دکھ سے تھا قصہ ہمارا

آلوک مشرا

لبالب دکھ سے تھا قصہ ہمارا

آلوک مشرا

MORE BY آلوک مشرا

    لبالب دکھ سے تھا قصہ ہمارا

    مگر چھلکا نہیں دریا ہمارا

    اثر اس پر تو کب ہونا تھا لیکن

    تماشا بن گیا رونا ہمارا

    مگر آنے سے پہلے سوچ لو تم

    بہت ویران ہے رستہ ہمارا

    عجب تپتی ہوئی مٹی ہے اپنی

    ابلتا رہتا ہے دریا ہمارا

    تمہارے حق میں بھی اچھا نہیں ہے

    تمہارے غم میں یوں جینا ہمارا

    اسی کو دکھ کا اندازہ تھا اپنے

    وہی تنہا سہارا تھا ہمارا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY