لبوں پہ ہے جو تبسم تو آنکھ پر نم ہے

مخمور سعیدی

لبوں پہ ہے جو تبسم تو آنکھ پر نم ہے

مخمور سعیدی

MORE BYمخمور سعیدی

    لبوں پہ ہے جو تبسم تو آنکھ پر نم ہے

    شعور غم کا یہ عالم عجیب عالم ہے

    گزر نہ جادۂ امکاں سے بے خیالی میں

    یہیں کہیں تری جنت یہیں جہنم ہے

    بھٹک رہا ہے دل امروز کے اندھیروں میں

    نشان منزل فردا بہت ہی مبہم ہے

    بڑھا دیا ہے اسیروں کی خستہ حالی نے

    قفس سے تا بہ چمن ورنہ فاصلہ کم ہے

    ابھی نہیں کسی عالم میں دل ٹھہرنے کا

    ابھی نظر میں تری انجمن کا عالم ہے

    کہاں یہ زندگی ہرزہ گرد لے آئی

    نہ رہ گزار طرب ہے نہ جادۂ غم ہے

    کچھ ایسے ہم نے ترے غم کی پرورش کی ہے

    کہ جیسے مقصد ہستی فقط ترا غم ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    لبوں پہ ہے جو تبسم تو آنکھ پر نم ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY