لفظوں کا سائبان بنا لینے دیجئے

فضیل جعفری

لفظوں کا سائبان بنا لینے دیجئے

فضیل جعفری

MORE BYفضیل جعفری

    لفظوں کا سائبان بنا لینے دیجئے

    سایوں کو طاق دل میں سجا لینے دیجئے

    گہرے سمندروں کی تہیں مت کھنگالیے

    دل کو کھلی ہوا کا مزا لینے دیجئے

    سوچے گا ذہن سارے مسائل کے حل مگر

    پہلے بدن کی آگ بجھا لینے دیجئے

    کب تک مثال دشت سہیں موسموں کا جبر

    خوابوں کا کوئی شہر بسا لینے دیجئے

    یادوں کے کھیت سوکھ چلے اب تو جعفریؔ

    تازہ غموں کی فصل اگا لینے دیجئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY