لہو لہان تھا شاخ گلاب کاٹ کے وہ

مصور سبزواری

لہو لہان تھا شاخ گلاب کاٹ کے وہ

مصور سبزواری

MORE BYمصور سبزواری

    لہو لہان تھا شاخ گلاب کاٹ کے وہ

    ہوا ہلاک چٹانوں کے خواب کاٹ کے وہ

    میں گزرے وقت کے کس آسماں میں جیتا ہوں

    گیا کبھی کا ہوا کی طناب کاٹ کے وہ

    اسی امید پہ جلتی ہیں دشت دشت آنکھیں

    کبھی تو آئے گا عمر خراب کاٹ کے وہ

    ہوئے ہیں خشک بھری دوپہر کئی دریا

    اس آرزو میں کہ رکھ دے سراب کاٹ کے وہ

    گزشتہ شب سے جزیرے میں واردات نہیں

    بھنور کو لے گیا یوں زیر آب کاٹ کے وہ

    مأخذ :
    • کتاب : dahliiz per utartii shaam (Pg. 72)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY