لمحہ لمحہ اک نئی سعئ بقا کرتی ہوئی

آزاد گلاٹی

لمحہ لمحہ اک نئی سعئ بقا کرتی ہوئی

آزاد گلاٹی

MORE BYآزاد گلاٹی

    لمحہ لمحہ اک نئی سعئ بقا کرتی ہوئی

    کٹ رہی ہے زندگی خود کو فنا کرتی ہوئی

    تیری چپ ہے یا مرے اندر مچا کہرام ہے

    کوئی شے تو ہے زباں کو بے نوا کرتی ہوئی

    اپنے اندر ریزہ ریزہ ٹوٹ کر بکھرا ہوں میں

    ہے یہ کیا شے چور دل کا آئنا کرتی ہوئی

    کشت جاں سے دن کو کٹتی ہے نئے زخموں کی فصل

    رات آتی ہے انہیں پھر سے ہرا کرتی ہوئی

    میرے ہونے سے نہ ہونے کا سبب پیدا ہوا

    مجھ کو ہستی ہی تھی خود مجھ سے جدا کرتی ہوئی

    موت تو آزادؔ ہے آزادیوں کا اک جہاں

    زندگی ہے ہر نفس خود کو رہا کرتی ہوئی

    مأخذ :
    • کتاب : Aab-e-Sharab (Pg. 25)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY