لمحہ لمحہ مرا ہر اک سے سوا جاگتا ہے

پیرزادہ قاسم

لمحہ لمحہ مرا ہر اک سے سوا جاگتا ہے

پیرزادہ قاسم

MORE BYپیرزادہ قاسم

    لمحہ لمحہ مرا ہر اک سے سوا جاگتا ہے

    میں الگ جاگتا ہوں درد جدا جاگتا ہے

    بخت بھی سوتے ہیں اور گھر کے مکیں بھی لیکن

    سرحد شب پہ کہیں ایک دیا جاگتا ہے

    خواب ہو جانے سے پہلے کوئی حرف خوش کام

    اسی امید پہ یہ ذہن رسا جاگتا ہے

    ہم پہ ہی خاص ہیں کچھ اس کی عنایات سو اب

    فتنہ اس شہر میں ہر روز نیا جاگتا ہے

    اے مرے درد بتا حد سے گزرنا کب ہے

    تو جو یوں جاگتا رہتا ہے تو کیا جاگتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY