لپٹ سی داغ کہن کی طرف سے آتی ہے

عرفان صدیقی

لپٹ سی داغ کہن کی طرف سے آتی ہے

عرفان صدیقی

MORE BYعرفان صدیقی

    لپٹ سی داغ کہن کی طرف سے آتی ہے

    جب اک ہوا ترے تن کی طرف سے آتی ہے

    میں تیری منزل جاں تک پہنچ تو سکتا ہوں

    مگر یہ راہ بدن کی طرف سے آتی ہے

    یہ مشک ہے کہ محبت مجھے نہیں معلوم

    مہک سی میرے ہرن کی طرف سے آتی ہے

    پہاڑ چپ ہیں تو اب ریگ زار بولتے ہیں

    ندائے کوہ ختن کی طرف سے آتی ہے

    کسی کے وعدۂ فردا کے برگ و بار کی خیر

    یہ آگ ہجر کے بن کی طرف سے آتی ہے

    جگوں کے کھوئے ہوؤں کو پکارتا ہے یہ کون

    صدا تو خاک وطن کی طرف سے آتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY