لے دیدۂ تر جدھر گئے ہم

محمد رفیع سودا

لے دیدۂ تر جدھر گئے ہم

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    لے دیدۂ تر جدھر گئے ہم

    ڈبرے جو تھے خشک بھر گئے ہم

    تجھ عشق میں روز خوش نہ دیکھا

    دکھ بھرتے ہی بھرتے مر گئے ہم

    تیرا جو ستم ہے اس کی تو جان

    اپنی تھی سو خوب کر گئے ہم

    یہ قطعہ پڑھے تھا سوز دل سے

    سودا کے جو رات گھر گئے ہم

    جوں شمع لبوں پر آ رہا جی

    تن تھا سو گداز کر گئے ہم

    اتنی بھی پتنگ پیش قدمی!

    گر شام نہیں سحر گئے ہم

    ہوگی نہ کسی کو یہ خبر بھی

    اس مجلس سے کدھر گئے ہم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY