لے کے پرچم مرے دامن کا کھڑے ہیں سارے

دویا جین

لے کے پرچم مرے دامن کا کھڑے ہیں سارے

دویا جین

MORE BYدویا جین

    لے کے پرچم مرے دامن کا کھڑے ہیں سارے

    آ کے پھر جسم پہ پتھر یہ پڑے ہیں سارے

    دفن کرنے کی ہے انساں کو ضرورت اب کیا

    شرم سے خود میں ہی خود سے تو گڑے ہیں سارے

    زیست کی راہ کو اب اپنی بنانا تو مثال

    ہیں پشیمان جو منزل پہ کھڑے ہیں سارے

    کتنی پرواز بھرو اپنا نہ آغاز تجو

    پر بکھر کے تو زمیں پر ہی پڑے ہیں سارے

    بدلا ہے سارا جہاں بدلی نہ قوم عاشق

    ان کو سمجھایئے کیا چکنے گھڑے ہیں سارے

    عمر تو ساری گنوائی ہو نہ پائے انساں

    پر خدا بننے کو پھر بھی تو اڑے ہیں سارے

    خود کو کر ختم ہی کرتے ہیں وہ آغاز نیا

    پتے وہ زرد جو شاخوں سے جھڑے ہیں سارے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے