لطف اب زیست کا اے گردش ایام نہیں

امانت لکھنوی

لطف اب زیست کا اے گردش ایام نہیں

امانت لکھنوی

MORE BYامانت لکھنوی

    لطف اب زیست کا اے گردش ایام نہیں

    مے نہیں یار نہیں شیشہ نہیں جام نہیں

    کب مجھے یاد رخ و زلف سیہ فام نہیں

    کوئی شغل اس کے سوا صبح سے تا شام نہیں

    ہر سخن پر مجھے دیتا ہے وہ بد خو دشنام

    کون سی بات مری قابل انعام نہیں

    نیک نامی میں دلا فرقۂ عشاق ہیں عشق

    ہے وہ بدنام محبت میں جو بدنام نہیں

    چہرۂ یار کے سودے میں کہا کرتا ہوں

    رخ ہے یہ صبح نہیں زلف ہے یہ شام نہیں

    بوسہ آنکھوں کا جو مانگا تو وہ ہنس کر بولے

    دیکھ لو دور سے کھانے کے یہ بادام نہیں

    حلقۂ زلف بتاں میں ہے بھری نکہت گل

    اے دل اس لام میں بوئے گل اسلام نہیں

    ابتدا عشق کی ہے دیکھ امانتؔ ہشیار

    یہ وہ آغاز ہے جس کا کوئی انجام نہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    لطف اب زیست کا اے گردش ایام نہیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY