لطف لے لے کے پیے ہیں قدح غم کیا کیا

اختر انصاری

لطف لے لے کے پیے ہیں قدح غم کیا کیا

اختر انصاری

MORE BY اختر انصاری

    لطف لے لے کے پیے ہیں قدح غم کیا کیا

    ہم نے فردوس بنائے ہیں جہنم کیا کیا

    آنسوؤں کو بھی پیا جرعۂ صہبا کی طرح

    ساغر و جام بنے دیدۂ پر نم کیا کیا

    حلقۂ دام وفا عقدۂ غم موج نشاط

    یہ زمانہ بھی دکھاتا ہے چم و خم کیا کیا

    لذت ہجر کبھی عشرت دیدار کبھی

    آرزو نے بھی طبیعت کو دیئے دم کیا کیا

    کس کس انداز سے کھٹکے رگ گل کے نشتر

    تپش افروز ہوئے شعلہ و شبنم کیا کیا

    شام ویراں کی اداسی شب تیرہ کا سکوت

    دل محزوں کو ملے ہمدم و محرم کیا کیا

    ہائے وہ عالم بے نام کہ جس عالم میں

    بیت جاتے ہیں دل زار پہ عالم کیا کیا

    عصمت و رفعت انجم سے خیال آتا ہے

    خاک میں روندی گئی حرمت آدم کیا کیا

    دب گئے منت مزدور سے ایواں کتنے

    جھک گئے غیرت مفتوح سے پرچم کیا کیا

    تھے مسلح غم معشوق سے گو ہم اخترؔ

    پھر بھی دکھلائے غم دہر نے دم خم کیا کیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY