محفل میں غیر ہی کو نہ ہر بار دیکھنا

پروین ام مشتاق

محفل میں غیر ہی کو نہ ہر بار دیکھنا

پروین ام مشتاق

MORE BYپروین ام مشتاق

    محفل میں غیر ہی کو نہ ہر بار دیکھنا

    میری طرف بھی بھول کے سرکار دیکھنا

    آغاز سبزہ سے ہے جو رخسار پر غبار

    اگلے برس اسے خط گل زار دیکھنا

    جب صرف گفتگو ہوں تو دیکھے انہیں کوئی

    منظور ہو جو ابر گہربار دیکھنا

    میں نے کہا کہ ہجر میں کچھ مشغلہ نہیں

    بولے کہ رات دن در و دیوار دیکھنا

    کہتا ہوں جب میں ان سے بناؤ سنگھار کو

    کہتے ہیں کوئی اور طرحدار دیکھنا

    میں جان بھی دریغ کروں تو گناہ گار

    میرے سوا نہ اور خریدار دیکھنا

    وہ مجھ سے پوچھتے ہیں کہ کچھ عیب تو نہیں

    رفتار دیکھنا مری گفتار دیکھنا

    شیخ زماں قدیم روش کے بزرگ ہیں

    کتنا بڑا ہے گنبد دستار دیکھنا

    وہ بار بار دیکھتے ہیں آئنہ میں منہ

    اللہ ان کا روئے پر انوار دیکھنا

    چلتے ہیں کوئے یار میں ہے وقت امتحاں

    ہمت نہ ہارنا دل بیمار دیکھنا

    ہوشیار پھونک پھونک کے رکھنا یہاں قدم

    پرویںؔ ذرا زمانہ کی رفتار دیکھنا

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY