میکدے کے سوا ملی ہے کہاں

فرید جاوید

میکدے کے سوا ملی ہے کہاں

فرید جاوید

MORE BYفرید جاوید

    میکدے کے سوا ملی ہے کہاں

    اور دنیا میں روشنی ہے کہاں

    آرزوؤں کا اک ہجوم سہی

    فرصت شوق کھو گئی ہے کہاں

    جتنے وارفتہ‌ٔ سفر ہیں ہم

    اتنی راہوں میں دل کشی ہے کہاں

    ساتھ آئے کوئی کہ رہ جائے

    زندگی مڑ کے دیکھتی ہے کہاں

    خوش ادا سب ہیں آشنا جاویدؔ

    اپنی آوارگی چھپی ہے کہاں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY