مے کشو جام اٹھا لو کہ گھٹائیں آئیں

جوشؔ ملسیانی

مے کشو جام اٹھا لو کہ گھٹائیں آئیں

جوشؔ ملسیانی

MORE BY جوشؔ ملسیانی

    مے کشو جام اٹھا لو کہ گھٹائیں آئیں

    اشربو کہتی ہوئی سرد ہوائیں آئیں

    عشق و الفت کی سزا مل گئی آخر مجھ کو

    میرے آگے مری معصوم خطائیں آئیں

    اب توجہ تو مرے حال پہ ہو جاتی ہے

    شکر کرتا ہوں کہ اس بت کو جفائیں آئیں

    خندہ زن داغ معاصی پہ ہوئی جاتی ہے

    لو مری شرم گنہ کو بھی ادائیں آئیں

    وہی مرنے کی تمنا وہی جینے کی ہوس

    نہ جفائیں تمہیں آئیں نہ وفائیں آئیں

    پھر وہ آمادہ ہوئے مجھ پہ برسنے کے لیے

    پھر مرے سر پہ مصیبت کی گھٹائیں آئیں

    اس قدر جور حسیناں سے رہا خوف زدہ

    حوریں آئیں تو میں سمجھا کہ بلائیں آئیں

    کوہ غم تھا مرا انعام محبت شاید

    چار جانب سے اٹھالو کی صدائیں آئیں

    ڈوبنے والی ہے کیا کشتئ امید اے جوشؔ

    موج تڑپی لب ساحل پہ دعائیں آئیں

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY