مے خانہ ہے بنائے شر و خیر تو نہیں

اعجاز وارثی

مے خانہ ہے بنائے شر و خیر تو نہیں

اعجاز وارثی

MORE BYاعجاز وارثی

    مے خانہ ہے بنائے شر و خیر تو نہیں

    اے شیخ و برہمن حرم و دیر تو نہیں

    قاصد کو تک رہا ہوں بجائے جواب خط

    کمبخت یہ نہ کہہ دے کہیں خیر تو نہیں

    اپنوں کا شکوہ کس لئے آئے زبان پر

    احباب کے ستم ستم غیر تو نہیں

    آپس میں کیوں ہیں بر سر پیکار اہل شہر

    دیکھو یہاں کہیں حرم و دیر تو نہیں

    اے شیخ صرف شکوۂ پندار زہد ہے

    ورنہ مجھے جناب سے کچھ بیر تو نہیں

    محو خرام غنچہ و گل دیکھ بھال کر

    پامالیٔ بہار ہے یہ سیر تو نہیں

    بندہ نواز آپ اور اظہار شکریہ

    اعجازؔ آپ کا ہے کوئی غیر تو نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY