مے سے روشن رہے ایاغ اپنا

امام بخش ناسخ

مے سے روشن رہے ایاغ اپنا

امام بخش ناسخ

MORE BYامام بخش ناسخ

    مے سے روشن رہے ایاغ اپنا

    گل نہ ہو ساقیا چراغ اپنا

    ہجر میں تر ہو کیا دماغ اپنا

    خشک لب آپ ہے ایاغ اپنا

    نکہت زلف جب سے آئی ہے

    نہیں ملتا ہمیں دماغ اپنا

    کس کی ہم جستجو میں نکلے تھے

    نہیں پاتے کہیں سراغ اپنا

    کیا ہے مذکور مرہم کافور

    جب نمک سودا ہو نہ داغ اپنا

    ہے شب ہجر وادئ وحشت

    دیدۂ غول ہے چراغ اپنا

    رات دن گل رخوں سے صحبت تھی

    یاد آتا ہے خانہ باغ اپنا

    سو رہا جو لپٹ کے وہ گل تر

    دل ہوا آج باغ باغ اپنا

    برگ گل صاف بن گیا پھاہا

    کیا معطر ہوا دماغ اپنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY