آفتاب آئے چمک کر جو سر جام شراب

احمد حسین مائل

آفتاب آئے چمک کر جو سر جام شراب

احمد حسین مائل

MORE BYاحمد حسین مائل

    آفتاب آئے چمک کر جو سر جام شراب

    رند سمجھیں کہ ہے صادق سحر‌ جام شراب

    سب کے ہاتھوں پہ تھا شب بھر سفر جام شراب

    ہر خط دست بنا رہ گزر جام شراب

    دختر رز پہ گریں مست پتنگوں کی طرح

    شمع محفل ہو یہ لخت جگر جام شراب

    تھام لے دست سبو آئے جو چلنے میں لچک

    خط بغداد ہو موئے کمر جام شراب

    طور سینا کا گماں ہو خم مے پر سب کو

    اس طرح ہوش اڑاؤ اثر جام شراب

    ساغر مے میں نہیں پرتو خال ساقی

    ہے کف دختر رز میں سپر جام شراب

    خاک مے خانہ کی بن جاتی قیامت پس کر

    ہر قدم پر جو لچکتی کمر جام شراب

    آج مے نوشوں کا مجمع ہے کہاں اے ساقی

    کون سی بزم میں ہے شور و شر جام شراب

    جتنے مے خوار ہیں ساقی سے گلے ملتے ہیں

    سحر عید بنی ہے خبر جام شراب

    شیشۂ مے سے اڑا کاگ کبوتر کی طرح

    نامہ پہنچانے چلا نامہ بر جام شراب

    موج صہبا پہ گرا سپنۂ مینا اڑ کر

    ہے مرے سامنے تیغ و سپر جام شراب

    مے پلاتا ہے اگر ڈھانپ لے سینہ ساقی

    تیرے جوبن کو لگے گی نظر جام شراب

    آفتاب آ کے سکھاتا ہے چلن شب بھر کا

    رات کو ہوتا ہے اکثر گزر‌ جام شراب

    دست ساقی میں رہے دست قدح کش میں رہے

    گردن شیشۂ صہبا کمر جام شراب

    مست کرتے ہیں دو عالم کو یہی دو خود مست

    لذت نغمۂ مطرب اثر جام شراب

    کیا غضب ہے کہ ترا ہونٹھ نہ چوسے مائلؔ

    اور ہو تیرے لبوں تک گزر جام شراب

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY