یارو گھر آئی شام چلو میکدے چلیں

کرشن بہاری نور

یارو گھر آئی شام چلو میکدے چلیں

کرشن بہاری نور

MORE BYکرشن بہاری نور

    یارو گھر آئی شام چلو میکدے چلیں

    یاد آ رہے ہیں جام چلو میکدے چلیں

    دیر و حرم پہ کھل کے جہاں بات ہو سکے

    ہے ایک ہی مکان چلو میکدے چلیں

    اچھا نہیں پئیں گے جو پینا حرام ہے

    جینا نہ ہو حرام چلو میکدے چلیں

    یارو جو ہوگا دیکھیں گے غم سے تو ہو نجات

    لے کر خدا کا نام چلو میکدے چلیں

    ساقی بھی ہے شراب بھی آزادیاں بھی ہیں

    سب کچھ ہے انتظام چلو میکدے چلیں

    ایسی فضا میں لطف عبادت نہ آئے گا

    لینا ہے اس کا نام چلو میکدے چلیں

    فرصت غموں سے پانا اگر ہے تو آؤ نورؔ

    سب کو کریں سلام چلو میکدے چلیں

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY