میں عاشقی میں تب سوں افسانہ ہو رہا ہوں

ولی محمد ولی

میں عاشقی میں تب سوں افسانہ ہو رہا ہوں

ولی محمد ولی

MORE BYولی محمد ولی

    میں عاشقی میں تب سوں افسانہ ہو رہا ہوں

    تیری نگہ کا جب سوں دیوانہ ہو رہا ہوں

    اے آشنا کرم سوں یک بار آ درس دے

    تجھ باج سب جہاں سوں بیگانہ ہو رہا ہوں

    باتاں لگن کی مت پوچھ اے شمع بزم خوبی

    مدت سے تجھ جھلک کا پروانہ ہو رہا ہوں

    شاید وو گنج خوبی آوے کسی طرف سوں

    اس واسطے سراپا ویرانہ ہو رہا ہوں

    سودائے زلف خوباں رکھتا ہوں دل میں دائم

    زنجیر عاشقی کا دیوانہ ہو رہا ہوں

    برجا ہے گر سنوں نئیں ناصح تری نصیحت

    میں جام عشق پی کر مستانہ ہو رہا ہوں

    کس سوں ولیؔ اپس کا احوال جا کہوں میں

    سر تا قدم میں غم سوں غم خانہ ہو رہا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY