میں بند آنکھوں سے کب تلک یہ غبار دیکھوں

احمد محفوظ

میں بند آنکھوں سے کب تلک یہ غبار دیکھوں

احمد محفوظ

MORE BYاحمد محفوظ

    میں بند آنکھوں سے کب تلک یہ غبار دیکھوں

    کوئی تو منظر سیاہ دریا کے پار دیکھوں

    کبھی وہ عالم کہ اس طرف آنکھ ہی نہ اٹھے

    کبھی یہ حالت کہ اس کو دیوانہ وار دیکھوں

    یہ کیسا خوں ہے کہ بہہ رہا ہے نہ جم رہا ہے

    یہ رنگ دیکھوں کہ دل جگر کا فشار دیکھوں

    یہ ساری بے منظری سواد سکوت سے ہے

    صدا وہ چمکے تو دھند کے آر پار دیکھوں

    ترے سوا بھی ہزار منظر ہیں دیکھنے کو

    تجھے نہ دیکھوں تو کیوں ترا انتظار دیکھوں

    مأخذ :
    • کتاب : Ghazal Ke Rang (Pg. 27)
    • Author : Akram Naqqash, Sohil Akhtar
    • مطبع : Aflaak Publications, Gulbarga (2014)
    • اشاعت : 2014

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY