میں بھی حضور یار بہت دیر تک رہا

خالد ملک ساحل

میں بھی حضور یار بہت دیر تک رہا

خالد ملک ساحل

MORE BYخالد ملک ساحل

    میں بھی حضور یار بہت دیر تک رہا

    آنکھوں میں پھر خمار بہت دیر تک رہا

    کل شام میرے قتل کی تاریخ تھی مگر

    دشمن کا انتظار بہت دیر تک رہا

    اب لے چلا ہے دشت میں میرا جنوں مجھے

    اس جن پہ اختیار بہت دیر تک رہا

    وہ انکشاف ذات کا لمحہ تھا کھل گیا

    شاید درون غار بہت دیر تک رہا

    اب دیکھتے ہو کوئی سہارا ملے تمہیں

    میں بھی تو اشکبار بہت دیر تک رہا

    تم مصلحت کہو یا منافق کہو مجھے

    دل میں مگر غبار بہت دیر تک رہا

    میں خاک آسماں کی بلندی کو دیکھتا

    اپنوں پہ اعتبار بہت دیر تک رہا

    الزام خود سری بھی تو ثابت کیا گیا

    میں جب کہ خاکسار بہت دیر تک رہا

    ساحلؔ مری بلا سے مرا حشر ہوگا کیا

    دنیا میں باوقار بہت دیر تک رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY