میں چپ کھڑا تھا تعلق میں اختصار جو تھا

راجیندر منچندا بانی

میں چپ کھڑا تھا تعلق میں اختصار جو تھا

راجیندر منچندا بانی

MORE BYراجیندر منچندا بانی

    میں چپ کھڑا تھا تعلق میں اختصار جو تھا

    اسی نے بات بنائی وہ ہوشیار جو تھا

    پٹخ دیا کسی جھونکے نے لا کے منزل پر

    ہوا کے سر پہ کوئی دیر سے سوار جو تھا

    محبتیں نہ رہیں اس کے دل میں میرے لیے

    مگر وہ ملتا تھا ہنس کر کہ وضع دار جو تھا

    عجب غرور میں آ کر برس پڑا بادل

    کہ پھیلتا ہوا چاروں طرف غبار جو تھا

    قدم قدم رم پامال سے میں تنگ آ کر

    ترے ہی سامنے آیا ترا شکار جو تھا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    میں چپ کھڑا تھا تعلق میں اختصار جو تھا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY