میں دنیا کی خاطر ہوں دل ہونے والا

شاہین عباس

میں دنیا کی خاطر ہوں دل ہونے والا

شاہین عباس

MORE BY شاہین عباس

    میں دنیا کی خاطر ہوں دل ہونے والا

    مرا عہد ہے مستقل ہونے والا

    خدا ایسا تنہا کسی کو نہ رکھے

    کوئی بھی نہ ہو جب مخل ہونے والا

    پس آب و گل میں دکھا بھی چکا ہوں

    تماشا سر آب و گل ہونے والا

    سفینے بھرے آ رہے ہیں برابر

    ہے دریا کہیں منتقل ہونے والا

    وہی ایک ہم ہیں وہی ایک تم ہو

    یہ عالم نہیں معتدل ہونے والا

    لہو کے کنارے بھی زد پر ہیں دونوں

    یہ کیا زخم ہے مندمل ہونے والا

    مری راکھ دیکھو تو کیا مطمئن ہے

    میں اک شخص تھا مشتعل ہونے والا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY