میں حیران تھا منظر کی حیرانی پر

احسان گھمن

میں حیران تھا منظر کی حیرانی پر

احسان گھمن

MORE BYاحسان گھمن

    میں حیران تھا منظر کی حیرانی پر

    پھول کھلے تھے بہتے ہوئے جب پانی پر

    میرے کپڑے دیکھ کے مٹی بول پڑی

    گھاس اگاؤ میری بھی عریانی پر

    میں نے تیرا نام لکھا جب تاروں پر

    چاند ہنسا تھا میری اس نادانی پر

    یاد کرو جس رات اکٹھے بیٹھے تھے

    گھنٹوں بات چلی تھی رات کی رانی پر

    دیکھے ہیں کچھ دیکھے بھالے لوگ یہاں

    کس نے گھر آباد کیا ویرانی پر

    میں نے اک سجدے میں رات گزاری ہے

    یوں ہی نہیں یہ چاند بنا پیشانی پر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY