میں ہی انجام میں ہی ابتدا ہوں

روزینہ ترانیکر دگھے

میں ہی انجام میں ہی ابتدا ہوں

روزینہ ترانیکر دگھے

MORE BYروزینہ ترانیکر دگھے

    میں ہی انجام میں ہی ابتدا ہوں

    تھما وقفہ ہوں میں ہی سلسلہ ہوں

    مزاج دل مرا گوشہ گزیں ہے

    زمانے کی نظر میں نک چڑھا ہوں

    فسانہ نصف ہی ظاہر ہے میرا

    ہنسی میں غم چھپاتا مسخرا ہوں

    جو غربت میں بھی دل کو دے رئیسی

    میں مفلس کا وہیں اک حوصلہ ہوں

    کتابوں میں جو یکجا ہو نہ پایا

    وہ دائم زندگی کا تجربہ ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY