میں ہوں تری نگاہ میں تو ہے مری نگاہ میں

نسیم شاہجہانپوری

میں ہوں تری نگاہ میں تو ہے مری نگاہ میں

نسیم شاہجہانپوری

MORE BYنسیم شاہجہانپوری

    میں ہوں تری نگاہ میں تو ہے مری نگاہ میں

    عشق بھی ہے پناہ میں حسن بھی ہے پناہ میں

    جن کی طلب تھی معتبر مل گئیں ان کو منزلیں

    جن کی تلاش خام ہے آج بھی ہیں وہ راہ میں

    پاس بھی ہیں وہ دور بھی قرب بھی ہے فراق بھی

    کتنا حسیں ہے فاصلہ میرے دل و نگاہ میں

    عشق ہے وجہ دو جہاں عشق ہے روح دو جہاں

    خم ہے جبین بندگی عشق کی بارگاہ میں

    ضبط الم کے امتحاں دار و رسن کے مرحلے

    کون سی مشکلیں نہیں اہل وفا کی راہ میں

    زہد ہو کیوں نہ بے اثر تقویٰ ہو کیوں نہ رائیگاں

    کیف ہی کیف ہے ترے مے کدۂ نگاہ میں

    پلکوں پہ جب جلے چراغ آئیں نسیمؔ آندھیاں

    کتنا حسین ربط ہے اشک میں اور آہ میں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    میں ہوں تری نگاہ میں تو ہے مری نگاہ میں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY