میں جتنی دیر تری یاد میں اداس رہا

بشیر فاروقی

میں جتنی دیر تری یاد میں اداس رہا

بشیر فاروقی

MORE BYبشیر فاروقی

    میں جتنی دیر تری یاد میں اداس رہا

    بس اتنی دیر مرا دل بھی میرے پاس رہا

    عجب سی آگ تھی جلتا رہا بدن سارا

    تمام عمر وہ ہونٹوں پہ بن کے پیاس رہا

    مجھے یہ خوف تھا وہ کچھ سوال کر دے گا

    میں دیکھ کر بھی اسے اس سے نا شناس رہا

    تمام رات عجب انتشار میں گزری

    تصورات میں دہشت رہی ہراس رہا

    گلے لگا کے سمندر حسین کشتی کو

    سکوت تیرہ فضائی میں بدحواس رہا

    بشیرؔ میں اسے کس طرح بے وفا کہہ دوں

    نگاہ بن کے جو اس دل کے آس پاس رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے