میں نہیں کہتا ہر اک چیز پرانی لے جا

سریندر شجر

میں نہیں کہتا ہر اک چیز پرانی لے جا

سریندر شجر

MORE BYسریندر شجر

    میں نہیں کہتا ہر اک چیز پرانی لے جا

    مجھ کو جینے نہیں دیتی جو نشانی لے جا

    ایک بن باس تو جینا ہے تجھے بھی اے دوست

    اپنے ہم راہ کوئی رام کہانی لے جا

    جن سے امید ہے صحرا میں گھنی چھاؤں کی

    ان درختوں کے لیے ڈھیر سا پانی لے جا

    سچ کو کاغذ پہ اترنے میں ہو خطرہ شاید

    میری سوچی ہوئی ہر بات زبانی لے جا

    وہ جو بیٹھے ہیں حقیقت کا تصور لے کر

    ایسے لوگوں کے لیے کوئی کہانی لے جا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY