میں نظر سے ایک انداز نظر ہوتا ہوا

پریم کمار نظر

میں نظر سے ایک انداز نظر ہوتا ہوا

پریم کمار نظر

MORE BYپریم کمار نظر

    میں نظر سے ایک انداز نظر ہوتا ہوا

    کون ہے دن رات مجھ میں بے خبر ہوتا ہوا

    کھلتا جاتا ہے سمندر بادباں در بادباں

    میں سفر کرتا ہوا مجھ سے سفر ہوتا ہوا

    ایک وسعت آسماں در آسماں بڑھتی ہوئی

    اک پرندہ بال و پر میں تر بتر ہوتا ہوا

    ایک پہنائی مکاں سے لا مکاں ہوتی ہوئی

    ایک لمحہ مختصر سے مختصر ہوتا ہوا

    ایک انگڑائی سے سارے شہر کو نیند آ گئی

    یہ تماشا میں نے دیکھا بام پر ہوتا ہوا

    کھینچ لی کس نے طناب خیمۂ صدق و صفا

    کون ہے اس دشت غم میں بے ہنر ہوتا ہوا

    مأخذ :
    • کتاب : Lauh-e-Jahan (Pg. 39)
    • Author : Prem Kumar 'Nazar'
    • مطبع : Adabistan Publications Delhi-95 (2013)
    • اشاعت : 2013

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY