میں رات سست عناصر سے تنگ آ گیا تھا

اسامہ ذاکر

میں رات سست عناصر سے تنگ آ گیا تھا

اسامہ ذاکر

MORE BYاسامہ ذاکر

    میں رات سست عناصر سے تنگ آ گیا تھا

    مری حیات فسردہ میں رنگ آ گیا تھا

    نگاڑے پیٹے ہواؤں نے سرخ پہروں تک

    گدھوں کا جھنڈ کبوتر کے سنگ آ گیا تھا

    ستار بجنے لگے صبح کی مسہری پر

    دھنک کا قافلۂ ہفت رنگ آ گیا تھا

    فلک پہ رینگتے سورج زمین بوس ہوئے

    وہ شہسوار شفق بہر جنگ آ گیا تھا

    اندھیرے غار میں یہ کلکلاتی کھوپڑیاں

    انہی کے دیکھے رعونت پہ زنگ آ گیا تھا

    مرے جہان بلا صوت و حرف کے دوارے

    نہ جانے کون لئے جل ترنگ آ گیا تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY