میں ترے شہر میں آیا تو ٹھہر جاؤں گا

ماہر عبدالحی

میں ترے شہر میں آیا تو ٹھہر جاؤں گا

ماہر عبدالحی

MORE BYماہر عبدالحی

    میں ترے شہر میں آیا تو ٹھہر جاؤں گا

    سایۂ ابر نہیں ہوں کہ گزر جاؤں گا

    جذبۂ دل کا وہ عالم ہے تو انشا اللہ

    درد بن کر ترے پہلو میں اتر جاؤں گا

    محض بیکار نہ سمجھیں مجھے دنیا والے

    زندگی ہے تو کوئی کام بھی کر جاؤں گا

    دے کے آواز تو دیکھے شب تاریک مجھے

    روشنی بن کے فضاؤں میں بکھر جاؤں گا

    چھوڑ اے رونق بازار مرا دامن دل

    شام آنگن میں اتر آئی ہے گھر جاؤں گا

    میں مجاہد ہوں کسی سے نہیں ڈرتا لیکن

    سامنا خود کا جو ہو جائے تو ڈر جاؤں گا

    راستے صاف ہیں سب فضل خدا سے ماہرؔ

    کوئی دیوار نہ روکے گی جدھر جاؤں گا

    مآخذ :
    • کتاب : Hari Sonahri Khak (Ghazal) (Pg. 103)
    • Author : Mahir Abdul Hayee
    • مطبع : Bazme-e-Urdu,Mau (2008)
    • اشاعت : 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY