میں تجھے بھولنا چاہوں بھی تو نا ممکن ہے

اطہر ناسک

میں تجھے بھولنا چاہوں بھی تو نا ممکن ہے

اطہر ناسک

MORE BYاطہر ناسک

    میں تجھے بھولنا چاہوں بھی تو نا ممکن ہے

    تو مری پہلی محبت ہے مرا محسن ہے

    میں اسے صبح نہ جانوں جو ترے سنگ نہیں

    میں اسے شام نہ مانوں کہ جو تیرے بن ہے

    کیسا منظر ہے ترے ہجر کے پس منظر کا

    ریگ صحرا ہے رواں اور ہوا ساکن ہے

    تیری آنکھوں سے ترے ہاتھوں سے لگتا تو نہیں

    میرے احباب یہ کہتے ہیں کہ تو کمسن ہے

    ابھی کچھ دیر میں ہو جائے گا آنگن جل تھل

    ابھی آغاز ہے بارش کا ابھی کن من ہے

    عین ممکن ہے کہ کل وقت فقط میرا ہو

    آج مٹھی میں یہ آیا ہوا پہلا دن ہے

    آج کا دن تو بہت خیر سے گزرا ناسکؔ

    کل کی کیوں فکر کروں کل کا خدا ضامن ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے