میں اس سے دور رہا اس کی دسترس میں رہا

عباس رضوی

میں اس سے دور رہا اس کی دسترس میں رہا

عباس رضوی

MORE BYعباس رضوی

    میں اس سے دور رہا اس کی دسترس میں رہا

    وہ ایک شعلے کی صورت مرے نفس میں رہا

    نظر اسیر اسی چشم مے فشاں کی رہی

    مرا بدن بھی مری روح کے قفس میں رہا

    چمن سے ٹوٹ گیا برگ زرد کا رشتہ

    نہ آب و گل میں سمایا نہ خار و خس میں رہا

    تمام عمر کی بے تابیوں کا حاصل تھا

    وہ ایک لمحہ جو صدیوں کے پیش و پس میں رہا

    وہ ایک شاعر آشفتہ سر کہ مجھ میں تھا

    ہوا کا ساتھ نہ دے کر ہوا کے بس میں رہا

    کسی خیال کے نشے میں دن گزرتے رہے

    میں اپنی عمر کے انیسویں برس میں رہا

    مأخذ :
    • کتاب : Quarterly TASTEER Lahore (Pg. 187)
    • Author : Naseer Ahmed Nasir
    • مطبع : Room No.-1,1st Floor, Awan Plaza, Shadman Market, Lahore (Issue No. 7,8 Oct 1998 To Mar.1999)
    • اشاعت : Issue No. 7,8 Oct 1998 To Mar.1999

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY