میں وہی دشت ہمیشہ کا ترسنے والا

ساقی فاروقی

میں وہی دشت ہمیشہ کا ترسنے والا

ساقی فاروقی

MORE BY ساقی فاروقی

    میں وہی دشت ہمیشہ کا ترسنے والا

    تو مگر کون سا بادل ہے برسنے والا

    سنگ بن جانے کے آداب سکھائے میں نے

    دل عجب غنچۂ نورس تھا بکسنے والا

    حسن وہ ٹوٹتا نشہ کہ محبت مانگے

    خون روتا ہے مرے حال پہ ہنسنے والا

    رنج یہ ہے کہ ہنر مند بہت ہیں ہم بھی

    ورنہ وہ شعلۂ عصیاں تھا جھلسنے والا

    وہ خدا ہے تو مری روح میں اقرار کرے

    کیوں پریشان کرے دور کا بسنے والا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    میں وہی دشت ہمیشہ کا ترسنے والا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites