مکیں تھا وہ تو محبت کی بارگاہ تھا دل

نسیم سحر

مکیں تھا وہ تو محبت کی بارگاہ تھا دل

نسیم سحر

MORE BYنسیم سحر

    مکیں تھا وہ تو محبت کی بارگاہ تھا دل

    پھر اس کے بعد کوئی خانۂ تباہ تھا دل

    یہاں بھی آ کے غم یار نے ٹھکانہ کیا

    مرے لیے تو یہی اک پناہ گاہ تھا دل

    بضد اسی پہ تھا چلنا ہے کوئی جاناں کو

    جو میں نے راستہ بدلا تھا سد راہ تھا دل

    بنا لیا ہے اسے بھی حمایتی اس نے

    وگر نہ پہلے بڑا میرا خیر خواہ تھا دل

    ستم تو یہ ہے کہ اس کا ہی نام لیوا تھا

    جب اختیار میں میرے بھی گاہ گاہ تھا دل

    ملال ہوتا بھی کیا اس کے فیصلے پہ مجھے

    زمانہ ایک طرف تھا مرا گواہ تھا دل

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے