مکتب کی عاشقی بھی تاریخ زندگی تھی

مضطر خیرآبادی

مکتب کی عاشقی بھی تاریخ زندگی تھی

مضطر خیرآبادی

MORE BYمضطر خیرآبادی

    مکتب کی عاشقی بھی تاریخ زندگی تھی

    فاضل تھا گھر سے مجنوں لیلیٰ پڑھی لکھی تھی

    فرہاد جان دے گا شیریں تباہ ہوگی

    یہ تو خدا کے گھر سے گویا کہی بدی تھی

    قدرت کے دائرے میں اس وقت بت بنے تھے

    جب نعمت تکلم تقسیم ہو چکی تھی

    کعبے میں ہم نے جا کے کچھ اور حال دیکھا

    جب بت کدہ میں پہنچے صورت ہی دوسری تھی

    ماتم میں میرے مضطرؔ وہ کس ادا سے آیا

    آنکھوں میں کچھ نمی تھی ہونٹوں پہ کچھ ہنسی تھی

    مأخذ :
    • کتاب : Khirman  (Part-11) (Pg. 22)
    • Author : Javed Akhtar
    • مطبع : Javed Akhtar (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY