ممنوں ہی رہا اس بت کافر کی جفا کا

راسخ عظیم آبادی

ممنوں ہی رہا اس بت کافر کی جفا کا

راسخ عظیم آبادی

MORE BYراسخ عظیم آبادی

    ممنوں ہی رہا اس بت کافر کی جفا کا

    شکوہ نہ کیا دل نے کبھو شکر خدا کا

    اعضا کے تناسب کا نہ وارفتہ ہو اتنا

    آنکھیں ہیں تو رہ حیرتی انداز و ادا کا

    ہر دم ہے ہدف ناوک بیداد کا تیری

    پتھر کا کلیجا ہے مگر اہل وفا کا

    تابوت ہی دیکھا نہ مرا آنکھ اٹھا کر

    کیا شرم ہے کشتہ ہوں میں اس شرم و حیا کا

    پاس اس کے بنا دیجو مری آنکھ بھی نقاش

    گر کھینچے ہے تو نقش رخ اس حور لقا کا

    کس طرح میں اب سر پہ بھلا خاک نہ ڈالوں

    دیکھوں ہوں نشاں در پہ تری صد کف پا کا

    کس بیکسی کی مرگ ہے راسخؔ کا بھی مرنا

    نعش اس کی پہ کوئی نہ ہوا محو عزا کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY