منظر کی اوک سے بڑی اوچھی لپک اٹھی

عقیل عباس

منظر کی اوک سے بڑی اوچھی لپک اٹھی

عقیل عباس

MORE BYعقیل عباس

    منظر کی اوک سے بڑی اوچھی لپک اٹھی

    ہم جھڑ چکے تو پیڑ کی ڈالی لچک اٹھی

    پانی کی پیش رفت نے سوکھا بھگا دیا

    بارش کے بعد گھاس کی ٹکڑی لہک اٹھی

    گوری نے پاؤں راہ کے پتھر پہ رکھ دیا

    یعنی کمر کے زور سے گاگر چھلک اٹھی

    ندی کا زور اب کوئی چھاتی پہ روک لے

    پشتہ بنا رہے تھے کہ مٹی سرک اٹھی

    پورے بدن سے قافلے حرکت میں آ گئے

    رانوں میں سرخ آب کی سازش بدک اٹھی

    گردن کے جوڑ پر ترے بوسے کی بستگی

    اک لمس اور کان کی لو تک دمک اٹھی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY