منزل کے خواب دیکھتے ہیں پاؤں کاٹ کے

حمایت علی شاعر

منزل کے خواب دیکھتے ہیں پاؤں کاٹ کے

حمایت علی شاعر

MORE BYحمایت علی شاعر

    منزل کے خواب دیکھتے ہیں پاؤں کاٹ کے

    کیا سادہ دل یہ لوگ ہیں گھر کے نہ گھاٹ کے

    اب اپنے آنسوؤں میں ہیں ڈوبے ہوئے تمام

    آئے تھے اپنے خون کا دریا جو پاٹ کے

    شہر وفا میں حق نمک یوں ادا ہوا

    محفل میں ہیں لگے ہوئے پیوند ٹاٹ کے

    کھنچتی تھی جن کے خوف سے سد سکندری

    سوئے نہیں ہیں آج وہ دیوار چاٹ کے

    اب تو درندگی کی نعش بھی حسن ہے

    دیوار پر سجاتے ہیں سر کاٹ کاٹ کے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے