مر رہتے ہیں در پر ترے دو چار ہمیشہ

جوشش عظیم آبادی

مر رہتے ہیں در پر ترے دو چار ہمیشہ

جوشش عظیم آبادی

MORE BY جوشش عظیم آبادی

    مر رہتے ہیں در پر ترے دو چار ہمیشہ

    ہے جور و جفا تجھ کو سزا وار ہمیشہ

    عاشق ترا مرنے کو ہے تیار ہمیشہ

    دکھلا نہ مژہ خنجر خوں خار ہمیشہ

    اک چھیڑ نکالے ہے نئی یار ہمیشہ

    رہتا ہے مرے درپئے آزار ہمیشہ

    اللہ سلامت رکھے تیرے لب شیریں

    سنوایا کرے باتیں مزے دار ہمیشہ

    ہے ڈر سے ترے عالم بالا تہ و بالا

    لٹکے ہے تری عرش پہ تلوار ہمیشہ

    جوں حلقۂ در در پہ ترے صبح سے تا صبح

    رہتا ہے ترا طالب دیدار ہمیشہ

    اظہار کروں جس سے میں احوال کو اپنے

    احوال تباہ اس کا رہے یار ہمیشہ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY