مسافت منزلوں کی جب ہمارے سر پہ رکھی تھی

منصور عثمانی

مسافت منزلوں کی جب ہمارے سر پہ رکھی تھی

منصور عثمانی

MORE BYمنصور عثمانی

    مسافت منزلوں کی جب ہمارے سر پہ رکھی تھی

    فلک کاندھوں پہ رکھا تھا زمیں ٹھوکر پہ رکھی تھی

    ہمارے پیار کی شہرت ہوئی تھی یوں زمانے میں

    ورق سڑکوں پہ بکھرے تھے کہانی گھر پہ رکھی تھی

    کیا ہے حرف حق ہم نے ادا کچھ اس قرینے سے

    نظر قاتل پہ رکھی تھی زباں خنجر پہ رکھی تھی

    تجھے پانے کی الجھن میں کچھ ایسے دن بھی گزرے ہیں

    بدن شبنم سے جلتا تھا قضا بستر پہ رکھی تھی

    مأخذ :
    • کتاب : Kashmakash (Pg. 71)
    • Author : Mansoor Usmani
    • مطبع : Najma House, Baradari, Moradabad (2007)
    • اشاعت : 2007

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY