مصروف غم ہیں کون و مکاں جاگتے رہو

خلیل مامون

مصروف غم ہیں کون و مکاں جاگتے رہو

خلیل مامون

MORE BYخلیل مامون

    مصروف غم ہیں کون و مکاں جاگتے رہو

    خوابوں سے اٹھ رہا ہے دھواں جاگتے رہو

    ہیں شام کے نصیب میں تارے نہ آسماں

    رک سا گیا ہے قلب جہاں جاگتے رہو

    دل میں خیال ہے نہ نظر میں سوال ہے

    باقی نہیں ہے کوئی نشاں جاگتے رہو

    چاند اور ستارے ماند ہیں سورج بھی زرد زرد

    پھیکی پڑی ہے کاہکشاں جاگتے رہو

    پوجا کے پھول سوکھ گئے انتظار میں

    سویا ہوا ہے شہر بتاں جاگتے رہو

    مآخذ:

    • کتاب : Azkar (Pg. 138)
    • Author : Amjad Hussain Hafiz Karnataki
    • مطبع : Karnataka Urdu Academy (issue:23 April,May,June-2013)
    • اشاعت : issue:23 April,May,June-2013

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY