مسرور دل زار کبھی ہو نہیں سکتا

جوشؔ ملسیانی

مسرور دل زار کبھی ہو نہیں سکتا

جوشؔ ملسیانی

MORE BY جوشؔ ملسیانی

    مسرور دل زار کبھی ہو نہیں سکتا

    یعنی ترا دیدار کبھی ہو نہیں سکتا

    میں غیر وفادار کبھی ہو نہیں سکتا

    اس سے تمہیں انکار کبھی ہو نہیں سکتا

    اب لطف و کرم پر بھی بھروسہ نہیں اس کو

    اچھا ترا بیمار کبھی ہو نہیں سکتا

    اسے شیخ اگر خلد کی تعریف یہی ہے

    میں اس کا طلب گار کبھی ہو نہیں سکتا

    اعمال کی پرسش نہ کرے داور محشر

    مجبور تو مختار کبھی ہو نہیں سکتا

    ممکن ہے فرشتوں سے کوئی سہو ہوا ہو

    میں اتنا گناہ گار کبھی ہو نہیں سکتا

    آزار محبت ہے اور آزار ہے اے جوشؔ

    جو باعث آزار کبھی ہو نہیں سکتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY